آہ – سو لفظی کہانی

سو لفظی کہانی

آہ

محمدطلحہ ارشاد

آج جنازہ گاہ جاتے ہوئے کافی عرصے بعد اس سے ملاقات ہوئی، تو میں نے اس کو اپنے قریبی دوست کے فوت ہونے کی خبر دی اوربتایا کہ ابھی چھ بجے جنازہ ہے۔ قلت وقت کی وجہ سے میں اسے جنازہ گاہ کی طرف لے گیا اور اس کی تعلیم کے متعلق پوچھا تو وہ کھنگارتے ہوئے بولا: پی ایچ ڈی کرلی ہے۔ اب یونیورسٹی میں لیکچرار ہوں۔ اتنے میں ہم جنازہ گاہ پہنچ گئے، میت کاچہرہ دیکھنے کے بعد وہ مجھے ایک طرف لے گیا اور دھیمی آواز میں سوال کیا: بھائی! جنازے میں کتنی رکعات ہوتی ہیں؟

٭…٭…٭

admin

Read Previous

ایڈوانس بکنگ – سو لفظی کہانی

Read Next

بدگمانی ۔ سو لفظی کہانیاں

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے