المیزان

المیزان

پیش لفظ 

المیزان ، اس لفظ سے ہی یہ ظاہر ہورہا ہے کہ اس کہانی میںتوازنکی بات کی گئی ہے، وہ توازن جس کے قائم کرنے سے انسان ایک پتلی رسی پر سے بھی بغیر گرے چل سکتا ہے، وہی توازن جس کو تھام کر انسان ہوا میں تیرنا سیکھ سکتا ہے اور وہی توازن جس کو برقرار رکھ کر انسان ایک بڑے اور وزنی پتھر کو ایک چھوٹے اور کمزور پتھر پر کھڑا کرسکتا ہے۔

یہ پڑھ کر شاید آپ کو ایسا لگے کہ یہ کسی سائنس فکشن پر لکھا کوئی ناول ہے۔ جیسا میں نے جب اپنی ایک دوست کو یہ نام بتایاالمیزانتو اُس نے مجھ سے کہا،یار یہ تو کوئی کیمسٹری کی کتاب معلوم ہوتی ہے۔تو جواباً میں نے اُس سے کہا،بی بی پہلی بات بیلنس سکیل فزکس میں ہوتا ہے کیمسٹری میں نہیں لیکن اگر پھر بھی یہ آ پ کو کیمسٹری کی کتاب لگتی ہے تو میں کہونگی جی بالکل یہ ایک کیمسٹری کی کتاب ہی ہے لیکن یہاں جس ایلیمنٹ کی کیمسٹری دکھائی جارہی ہے وہانسانہے۔ وہی انسان جو جتنا ایک دوسرے سے مشابہت رکھتا ہے اتنا ہی ایک دوسرے سے مختلف ہے۔“ 

میری اس تحریر کو لکھنے کی دو بنیادی وجوہات ہیں جن میں سے ایک میں آپ کو بتادیتی ہوں دوسری راز ہے، تو ایک وجہ یہ ہے کہ میں نے اکثر و بیشتر یہ محسوس کیا ہے کہ انسان اپنی زندگی کو دو انتہاں پر گزار رہا ہے جبکہ میرا خیال ہے کہ انسان کو اپنی زندگی دو انتہاں کے بیچ میں رہ کر گزارنی چاہیے اور اپنے اسی خیال کی بنیاد پر میں نے یہ ناول لکھا ہے جس کے تین مرکزی کردار ہیں۔

مسعود خان، وہ باپ جس نے لمحہ لمحہ اپنی بیٹیوں کی حفاظت کی لیکن کبھی بھی اُن کی زندگی کی بیساکھی نہیں بنا، انہیں ہمیشہ اپنی زندگی کے فیصلے کے لیے خود مختار رکھا۔

شہمین مسعود، وہ لڑکی جس نے بار بار غلطی کی مگر پھر سنبھل گئی۔ اور میرا تیسرا کردار سفیر احمد ، اس کردار کے متعلق کچھ بھی کہنامیرے لیے بہت مشکل ہے۔ اس لیے اسے میں آپ پر چھوڑتی ہوں۔ اسے آپ خود پڑھیں اسے سمجھیں اسے پرکھیں اس پر غور و فکر کریں پھر خود فیصلہ کرلیں یہ کیسا تھا۔

ہاں بس میں اتنا ضرور کہوں گی کہ یہ آپ کو لمحہ لمحہ چونکائے گا ضرور۔

فاطمہ شیخ

admin

Read Previous

گل موہر اور یوکلپٹس

Read Next

اوپرا ونفرے

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے